Love

Love

M. Shahid Alam — 1968

عشق پر زور نہیں ہے یہ وہ آتش غالب
کہ لگاے نہ بنے اور بجھاے نہ بنے

Love does not bend to your will.
It is a blaze which if you will
You cannot light: and once lighted,
You cannot put out, do what you will.

Advertisements
Heaven

Heaven

M. Shahid Alam — 1969

ہم کو معلوم ہےجنّت کی حقیقت لیکن
دل کے بہلانے کو غالب یہ خیال اچھا ہے

I know the stuff and aim of Heaven,
Of ruby-lipped and azure-eyed women,
Of musk and milk and ruby-tinted wine.
Alas a tale, to console the grief-smitten!

Mystic Gleam

Mystic Gleam

M. Shahid Alam — 1969

پرتوِ خور سے ہے شبنم کو فنا کی تعلیم
میں بھی ہوں ایک عنایت کی نظر ہوتے تک

At dawn the eye of heaven shone
And kissed the dewdrops with a beam.
I too shall pass beyond all dreams,
Wrapped in the Saqi’s mystic gleam.

A Few

A Few

M. Shahid Alam – Mudlark – 2017

سب کہاں کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں
خاک میں کیا صورتیں ہونگی کہ پنہاں  ہو گئیں

Not all, only a few return
In lilacs and roses; how many
Sages, what lovely faces,
Slumber in cold ashes?